Skip to content

مسکین خان بنام محکمہ جنگلات

عالمی افسانہ میلہ 2015ء
مسکین خان بنام محکمہ جنگلات / افسانہ
تحریر : رضوانہ سیدعلی
اسلام آباد پاکستان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مائی باپ !
فدوی ایک غریب مسکین، سا بندہ ھے ۔ پندرہ بکریاں ،چھ بھیڑیں،ایک گائے اور کوئی چار درجن کے قریب مرغیاں ہی کل اثاثہ ھے ۔ انہی جانوروں کے بل بوتے پہ یہ عاجز ،لاچار ایک بڑے خاندان کا کفیل ھے ۔ جس میں بوڑھے ماں باپ،دو چھوٹے بھائی ،چھ جوان بہنیں،ایک بیوہ بھابی پانچ بچوں سمیت اور فدوی کی بیوی اور چھ بچے شامل ہیں ۔ مائی باپ !گزر بسر تو ان جانوروں کے سبب ھو رہی ھے ۔ جو روکھی سوکھی ملتی ھے اللہ کا شکر ادا کر کے کھا لیتے ہیں ۔ اصل پریشانی یہ ھے کہ ایک بڑا ہیبتناک شیر بہت دنوں سے ہمارے احاطے کا چکر لگا رہا ھے ۔ ویسے تو ہم نے ایک راکھا کتا رکھا ھوا ھے مگر وہ شیر کو دیکھ کر بجائے اسکے کہ بھونک کر ہمیں اطلاع دے ،جھٹ اپنے کتا گھر میں جا گھستا ھے اور دم پیروں میں دبا کر ایسی مدھم آواز میں کوں کوں کرتا ھے کہ کتے کے بجائے بکری معلوم پڑتا ھے ۔دادا کے زمانے کی ایک بندوق بھی گھر میں موجود ھے اور اسے چلانا تو کجا کبھی اتار کر تیل بھی نہیں دیا گیا کہ محکمہ جنگلات کی جانب سے جنگلی جانوروں خصوصاً شیر چیتوں پہ گولی چلانے کی سختی سے مناہی ھے اور ایسا کرنے والوں کے لئے بھاری سزائیں مقرر ہیں ۔
مگر شیر چیتے ہم پہ آنکھ رکھ لیں تو پھر ہمیں کیا کرنا ھوگا؟ اس سے ہم واقف نہیں ۔ حضور سے التجا ھے کہ میرے جان و مال کو تحفظ دیا جائے۔ میرا خاندان تا حیات آپکا احسان مند رھے گا ۔
دعا گو خادم
مسکین خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسکین خان !
تمہاری درخواست موصول ھوئی ۔ محکمہ عنقریب ایک ماہر کو تمہارے علاقے کی طرف روانہ کر رہا ھے تاکہ تمام صورت حال کا جائزہ لیا جا سکے ۔
ناظم اعلیٰ محکمہ جنگلات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حضور والیٰ ! دو ہفتے گزر چکے ہیں ۔ آپ کا بھیجا ھوا ماہرابھی تک نہیں پہنچا ۔ اس عرصے میں شیر دو بھیڑیں اور ایک بکری چیر پھاڑ چکا ھے ۔ دہائی ھے ۔ سرکار کی دہائی ھے ۔
فریاد مند
مسکین خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسکین خان ! تم بے خبرے سدا بے خبر ہی رہنا ۔ ہمارا ماہر تو علاقے کا معائنہ کر کے کب کا جا چکا ۔ اس نے شیر کی تصاویر کے ساتھ اپنی رپورٹ پیش کر دی ھے ۔ محکمہ جنگلات نے ایک کمیٹی بٹھا دی ھے جو غور کر رہی ھے کہ اس نادرالنسل جانور کے لئے کیا کیا جائے ۔
مشیر ناظم اعلیٰ
محکمہ جنگلات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آقا ولی نعمت ! شیروں کی تعداد تو روز بروز بڑھتی جا رہی ھے ۔ پہلے دو ھوئے ،پھر تین،اب تو پورے پانچ شیر دندنا رھے ہیں۔ان کی دیدہ دلیری کا یہ حال ھے کہ ہمارے جانوروں کو چیر پھاڑ کر ،ہمارے ہی صحن میں بیٹھ کر ضیافت اڑاتے ہیں اور ہم بے بسی سے ہاتھ ملنے کے سوا کچھ نہیں کر سکتے ۔ آقا ! ہماری مدد کو آئیے ۔ کچھ کیجیے سرکار ۔ ہمارا خاندان تباہ ھو جائے گا ۔ یہ جانور ہی تو ہماری روٹی روزی کا ذریعہ ہیں ۔
مدد کا طالب
مسکین خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسکین خان ! ہماری کمیٹی تمام معاملات کا بغور جائزہ لے رہی ھے ۔ ناظم اعلیٰ صاحب کو بہت ہی ضروری کام سے غیر ملکی دورے پہ جانا پڑ گیا ھے اور پندرہ بیس دن سے پہلے ان کا لوٹنا ناممکن ھے ۔ ان کی غیر حاضری میں کیمٹی کوئی قدم نہیں اٹھا سکتی ۔ تمہیں بھی انتظار کرنا ھو گا ۔
مشیر ناظم اعلیٰ جنگلات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حضور انور ! میں تو تاقیامت انتظار کر لوں گا مگر جانوروں کو کسی کی اجازت درکار نہیں ۔ وہ بلا توقف ہمارے جانور ہڑپ کئے جا رھے ہیں ۔ سرکار ! میرے بھائی بس اتنی اجازت چاہتے ہیں کہ وہ دیوار سے بندوق اتار کر اسے تیل وغیرہ دے کر اس میں گولیاں بھر لیں اور ایک دو ھوائی فائر کر دیں تاکہ جانور ڈر کر ذرا دور چلے جائیں ۔ کل ان درندوں نے ہماری گائے کو چیر پھاڑ ڈالا ۔ ہمارے بچے دودھ کو بلک رھے ہیں ۔ جب تک محکمہ کوئی قدم نہیں اٹھاتا ہمیں اپنی حفاظت کے لئے ھوائی فائر کی اجازت دیجیے ۔
تابع فرمان
حرماں نصیب مسکین خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسکین خان ! خبردار ایسی حماقت نہ کرنا ۔ تم نہیں جانتے یہ جانور کسقدر قیمتی ہیں ۔ پوری دنیا میں انہیں مارنا،ان کا شکار کرنا سنگین جرم ھے ۔ حوصلہ پکڑو ۔ ہم نے کمیٹی بٹھا رکھی ھے نا جلد اس مسئلے کا کوئی نہ کوئی حل نکل آئے گا ۔
مشیر ناظم اعلی جنگلات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان داتا ! اب تو شیروں نے مرغیوں پہ ہاتھ صاف کرنا شروع کر دیا ھے ۔ میرے بھائی ناراض ھو کر گھر چھوڑ گئے ہیں ۔ بچے بھوک سے بلبلا رھے ہیں ۔ بچے کھچے مویشی چرنے کے لئے باہر نہیں جا سکتے ۔ راشن تقریباً ختم ھو چکا ھے ۔ شیروں کو گروہ بے خوف و خطر ہمارے احاطے میں ٹہلتا پھرتا ھے ۔ جو کرنا ھے جلدی کیجئے سرکار جلدی۔
کشتہ ستم
مسکین خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
محکمہ جنگلات
جواب ندارد
٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭
حضور ! مویشی ختم ۔ بچے زندہ درگور ۔ ہم بچے کھچے افراد پچھلے کمرے میں بند ہیں ۔ صحن میں درندے یوں غرا رھے ہیں جیسے وہ ہمیں چیرنے پھاڑنے کو بیتاب ھوں ۔یہ خط ڈالنے میں پچھلی کھڑکی سے جاؤں گا ۔خدارا ! کچھ تو رحم کیجیے ۔ آفت زدہ
مسکین خان
٭ ۔ ٭ ۔ ٭ ۔ ٭
مسکین خان ! مبارک ھو ۔ کمیٹی کی سخت محنت اور ناظم اعلیٰ صاحب کی شفقت کے تتیجے میں آخر یہ طے پا گیا ھے کہ تمہیں تمہارے کنبے سمیت کہیں اور منتقل کر دیا جائے ۔ تمہارے نقصان کی تلافی بھی کی جائے اور تمہارے موجودہ ٹھکانے کو تحفظ جنگلی حیات کے پارک میں تبدیل کر دیا جائے تاکہ نایاب نسل کے قیمتی جانور پھول پھل سکیں ۔ بس جلد کاروائی جاری سمجھو ۔ انچارج محکمہ جاتی کاروائی کمیٹی
٭ ۔ ٭ ۔ ٭ ۔ ٭
اور جب یہ خط اندھیر نگری چوپٹ راج احاطہ مسکین خان تک پہنچا تو اسے وصول کرنے کو وہاں کوئی موجود نہ تھا ۔پورے احاطے میں ٹہلتے خونخوار درندوں نے چٹھی کے پرزے اڑا دئیے اور جنگل کی بے مہار ھوائیں یہ پرزے تھامے گنگاتی پھرٰیں ۔ چوں تریاق از عراق آئد مار گزیدہ مردہ شود
مار گزیدہ مردہ شود ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ مار گزیدہ ۔۔۔۔۔۔۔
معائنہ کیمٹی کے بس میں بیٹھے اراکین خوشی سے جھوم اٹھے ۔ یہاں کی ہواؤں کے گیت کتنے سریلے ہیں ۔

Published inعالمی افسانہ فورم