Skip to content

لا “شے”

عالمی افسانہ میلہ 2015
افسانہ نمبر 80
لا “شے”
سید تحسین گیلانی، جوہنسبرگ، جنوبی افریقہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سفید پرندہ نما فضا میں معلق تھا۔۔۔۔ نہ دن تها نہ رات تهی وقت یوں کہ جیسے رُک سا گیا تها ۔۔۔۔۔ پرندہ اس اجنبی بو کو سونگھ رہا تها۔۔۔۔۔۔ اور مسلسل پر پھڑپھڑا رہا تها۔۔۔۔۔۔ میں وہاں تها _____آئینہ بهی وہیں تها ___لیکن یہ کیا ؟؟ میں آئینے میں نہیں تها!!!! کچھ سہمے ان دیکھے سایوں کا احساس مجھے ہو رہا تها۔۔۔۔۔۔ شاید میں بهی ہوا میں معلق تها۔۔۔۔۔۔ پر پھڑپھڑا رہا تها___ لیکن یہ پر کہاں سے آئے۔۔۔۔۔؟؟؟ میں تو بے پر تها۔۔۔۔۔ اور۔۔۔۔۔ اور وہ آئینہ نہیں تها۔۔۔۔۔ آسمان تھا کالا آسمان ۔۔۔۔۔ کالا آسمان!!! وہاں تو کچھ بهی روشن نہیں تها__ اندھیرا ہی اندھیرا تها لیکن مجھے صاف دکهائی دے رہا تها سب کچھ صاف___ سب صاف تها ‘ کہ وہاں کچھ نہیں تها !! کہ اچانک کوئی خیالی جسم مجھ سے ٹکرایا___ میں بے قابو دور تلک اڑتا اڑاتا چلا گیا۔۔۔۔ اچانک منظر بدل گیا۔۔۔۔۔ میں کسی لال جزیرے میں نکل آیا تها__!!! کوئی پکارا۔۔۔۔۔ ادھر دیکھو! میں نے ادھر ادھر دیکھا کچھ نظر نہ آیا__ تو پکارنے والا پکارا۔۔۔۔۔۔ صرف سنو !! میں قریب ہی ہوں بس محسوس کرو۔۔۔۔۔ میں تمہاری ” میں ” ہوں!! لا ” شے” ہوں تم کبھی انسان تهے۔۔۔۔۔!!؟؟ تها تو۔۔۔۔۔!!!! نہیں بلکہ ہوں____ میں نے پهر خود کو آئینے میں تلاشنا چاہا۔۔۔۔۔۔ لیکن میں وہاں نہیں تها، صرف آسمان تها۔۔۔۔۔ اب کی بار لال آسمان پکارنے والا ہنستے ہوئے بولا ___یعنی میں لا ” شے” ہو کر بهی تم میں ہوں۔۔۔۔۔ اور تم۔۔۔۔ تم۔۔۔۔۔ سب ہو کر بهی نہیں ہو۔!!! میں نے کہا یہ شاید تمہاری وجہ سے تو نہیں ہے؟؟ نہیں میری نہیں __تمہاری اپنی وجہ سے ہی یہ سب ہے۔ کیونکہ کہ تم نے مجھے پوجا ۔۔۔۔۔ یاد کرو محبت میں عبادت میں قرابت میں دوری میں رفاقت میں حجابت میں خیالوں میں۔۔۔۔۔۔ اندھیروں میں۔۔۔۔۔ اجالوں میں۔۔۔۔ تم نے صرف اور صرف مجھے چاہا ____یعنی خود کو چاہا ___بہت بار لمحوں نے تمہیں پکارا کہ اس کی پوجا مت کرو ___یہ لال جزیرے کا راستہ ہے –لیکن تم اس کی پوجا میں ایسے مگن تهے کہ تم نے دھیان ہی نہیں دیا -میں سب سنی ان سنی کر رہا تها …لیکن تم اور میں دکهائی کیوں نہیں دے رہے …یا کیا تم مجھے دیکھ رہے ہو ؟؟ہاں ہم تمہیں دیکھ رہے ہیں __!!ہم سے تمہاری کیا مراد ہے –؟وقت آنے پر سب پتہ چل جائے گا …ابهی سنو !!اچها !! تو میں کیوں نہیں دیکھ پا رہا ؟ ہا ہا ہا ہا تم تب بهی دیکھ نہیں پائے تهے ___آج بهی دیکھ نہیں پاوٗ گے _______!! وہ لال پہاڑ دیکھو ۔ کہاں ؟ اب دیکھو __!ہا ں، ہاں، ہاں، اب نظر آیا۔۔۔۔۔ آہ یہ کیا ہے؟؟ اتنا بڑا پہاڑ !!ہاں یہ پہاڑ تم نے بنایا ہے ___ میں نے ؟؟؟ وہ کیسے ؟؟ ارے لیکن اس سے تو لاوٗے کے جیسے سرخ خون بہہ رہا ہے۔ آفا اسے ہٹاؤ۔۔۔۔۔ ہاں اسے تم نے بنایا ہے۔۔۔۔ مجھ جیسوں کی مدد سے مل کر۔۔۔۔ وہ سب بهی یہاں میرے ساتھ ہیں تمہارے تمام قریبی ساتھی۔۔۔۔ باری آنے پر ان سب سے بهی ملاقات ہو گی ___غور سے دیکھ لو اس پہاڑ کو۔۔۔۔۔ میں۔۔۔ میں۔۔۔۔۔ اسے ایک بار قریب سے دیکھنا چاہتا ہوں… ابهی جملہ مکمل نہیں ہوا تها کہ میں اس سے قریب تر تها۔۔۔۔ عین قریب۔۔۔۔ میں ہوا میں ہی معلق تها وہ سفید پرندہ نما اب لال ہو چکا تها۔۔۔۔ مسلسل پر پهڑپهڑائے جا رہا تها۔ اس پہاڑ سے اٹھتی ناگوار بو کو سونگھ رہا تها۔۔۔ گاڑهے خون کی بدبو۔۔۔۔۔ چبائے ہوئے کچے گوشت کی سڑن۔۔۔۔ آسمان۔۔۔۔ زمین۔۔۔۔ سارا منظر لال تها۔۔۔۔!! کوئی پهر پکارا۔۔۔۔ دیکھ لو غور سے دیکھ لو یہ تمہاری زبان کا تهوک ہے۔۔۔۔۔ جو یہاں جمع ہے !!میں چلاّیا چیخا لیکن آواز تهی کہ گلے سے نکل ہی نہیں رہی تهی۔۔۔۔ رکو، رکو، رکو، یاد آیا میرے پاس ایک سبز وعدہ بهی تو تها۔۔۔۔ وہ کہاں ہے؟؟؟ شاید۔۔۔۔ ہو گا۔۔۔ لیکن اسے تم نے ہمارے ساتھ مل کر زندہ دفنا دیا۔ کچھ کرو مجھے یہاں سے نکالو۔۔۔شور مت کرو ابهی تو ملاقاتیں باقی ہیں ۔۔۔۔۔ نہیں نہیں نہیں مجھے اس لال جزیرے سے نکالو میں مر جاؤں گا ہا، ہا، ہا، ہا، آوٗ تمہیں تمہارے ایک اور عزیز دوست تمہارے اپنے ” تم ” تمہیں سے ملاواتے ہیں۔

منظر ایک بار پھر بدل گیا۔۔۔۔۔۔۔ میں کسی سیاہ وادی میں تها کالے کانٹوں بهری نوکیلی زمین پر کھڑا تها کہ اتنے میں میرے اندر میری آنکھ کھلی۔۔۔۔ اور آواز آئی: وَالْعَصْرِ؛ إِنَّ الإِنسَانَ لَفِي خُسْر۔

Published inافسانچہسید تحسین گیلانیعالمی افسانہ فورم