Skip to content

عید کا چاند

عید کا چاند

اقبال حسن آزاد

دور کہیں پہیوں کی گڑگڑاہٹ اُبھری۔
کوئی ٹرین گذر رہی تھی ۔پھر وہ آواز معدوم ہوگئی۔اب ہر طرف سناٹا تھا اور ایک دبیز تاریکی۔اس کی آنکھیں کھل نہیں پا رہی تھیں۔دونوں پپوٹے آپس میں یوں پیوست ہو گئے تھے گویا کسی نے انہیں گوند سے چپکا دیا ہو۔اس نے زور سے چلانا چاہا مگر اس کے حلق سے کوئی آواز نہ نکل سکی۔اسے اپنا دم گھٹتا ہوا محسوس ہوا۔وہ گہری،اندھیری اور دبیز دلدل میں دھنستا جا رہا تھا ۔ساتھ ہی ساتھ اس کے سارے احساسات بھی زرد موسم کے پتوں کی طرح اس کا ساتھ چھوڑے جا رہے تھے مگر امید کا ایک ننھا سا ستارا زندگی کی علامت بن کر جھلملا رہا تھا۔دیکھتے ہی دیکھتے اس ستارے کے ذرا نیچے باریک سا چاند طلوع ہوا۔پھر اس کے کانوں میں خوشگوار ہوا کے جھونکوں کے ساتھ ایک چہکار گونجی۔
”ابا!ابا!! میرے لئے نئے کپڑے“ایک بچی کی معصوم فرمایش۔
”اور میرے لئے بہت سارے کھلونے“ایک توتلی آواز۔
”اور تمہارے لئے؟“اس نے شرات آمیز نظروں سے سلمہ کی جانب دیکھتے ہوئے پوچھا۔ستارہ جیسی آنکھوں والی نے اسے ایک لسٹ تھمادی۔چوڑیاں،ساڑی،بلاوز اور نہ جانے کیا کیا۔
دیکھتے ہی دیکھتے رو پہلا چاند غروب ہو گیا مگر وہ روشن ستارہ اب بھی جھلملا رہا تھا۔اس کا جی چاہا کہ زور زور سے رونا شروع کر دے مگر اب اسے خود پر کوئی اختےار نہ تھا۔وہ نہ چیخ سکتا تھا،نہ چلا سکتا تھا اور نہ ہی رو سکتا تھا۔
اچانک اس کانوں میں کسی غم زدہ عورت کے رونے کی آواز آئی ۔اس نے اپنی چھاتی پر دو ہٹّر مارا۔چوڑیوں کے ٹوٹنے کا چھناکا ہوا اور پھر ایک ساتھ کئی عورتیں رونے لگیں۔اس نے بچی کھچی طاقت کو یکجا کر کے اپنے جسم کو جنبش دینا چاہا۔اس دفعہ وہ کامیاب رہا مگر اسے اپنے بائیں بازو میں زبردست ٹیس محسوس ہوئی ۔اس کے منہ سے ایک ہلکی سی کراہ نکلی۔پھر ایک ساتھ کئی آوازیں اس کے پردہ سماعت میں ارتعاش پیدا کرنے لگیں۔
”اس Dead Bodyکو یہاں سے شفٹ کرو۔“پہلی آواز آئی
۔
”اسٹریچر لاو۔“ددسری آوازآئی۔
اس نے زور سے سانس لی اور پھر اس کی آنکھیں آپے آپ کھل گئیں۔اس نے نظریں گھما کر چاروں طرف دیکھا۔وہ کسی ہسپتال کا جنرل وارڈ تھا ۔پورا کمرہ بھانت بھانت کے لوگوں سے بھرا پڑا تھا۔دا ہنی جانب والی بیڈ پر ایک لاش پڑی تھی۔ایک بے حال سی عورت لاش کے پائتانے بال بکھرائے بے سدھ پڑی تھی۔تین مرد،جن کے شیو بڑھے ہوئے تھے،بیڈ کے ارد گرد کھڑے تھے۔دو چھوٹے چھوٹے بچے خالی نظروں سے لاش کو تکے جا رہے تھے۔یہ نظارہ دیکھ کر وہ ایک بار پھر بے ہوشی کے دلدل میں دھنسنے لگا۔پھر وہی دبیز تاریکی مگر وہ ننھا ستارہ اب بھی جھلملا رہا تھا ۔پھر وہ ستارہ اس کی نگاہوں کے قریب آتا گیا یہاں تک کہ اس نے ایک دودھیا بلب کی شکل اختیار کر لی اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے انگنت دودھیا بلب اس کے چاروں طرف روشن ہو گئے۔ساڑیوں کی اس بڑی سی دکان میں بڑی ہما ہمی تھی ۔وہ کاو¿نٹر کے پیچھے کھڑا نہایت مشاقی کے ساتھ گاہکوں کو ساڑیاں دکھانے میں مشغول تھا۔دکان میں بس عورتیں ہی عورتیں تھیں۔جب وہ کوئی خوبصورت ساڑی کاو¿نٹر پر پھیلاتاتو یہ سوچے بغیر نہیں رہتا کہ یہ اس کی بیوی پر کیسی لگے گی۔بس چند دنوں کی بات ہے ۔عید میں وہ اپنے گھر پر ہوگا بیوی بچوں کے ساتھاس نے ساری تےاریاں مکمل کر لی تھیں۔ایک روز سیٹھ جی نے دریافت کیا۔
”کہیے نسیم میاں!ریزرویشن ہو گیا؟“
”نہیں جناب! بہت کوشش کی ۔ٹریولنگ ایجنٹ کے پاس بھی گیا۔تتکال میں ہونے کی بھی امید نہیں ہے۔کسی گاڑی میں کوئی جگہ نہیں ہے۔“
”اب آپ کیسے جائیے گا؟“
”اب تو جنرل بوگی میں جانا ہوگا۔“
”مگر اس میں تو بڑی پریشانی ہو گی۔“
”اب کیا کیا جائے۔جانا تو ہے ہی۔“
عید کے دو روز قبل جب وہ اسٹیشن پہنچا تو بھیڑ دیکھ کر اس کے پسینے چھوٹ گئے۔جنرل بوگی میں تل رکھنے کی جگہ نہ تھی۔ایک قلی کو روپے دے کربس بیٹھنے بھر کا انتظام کر پایا تھا۔اپنا سوٹ کیس اس نے سیٹ کے نیچے رکھ دیا ۔وہ کرتا پائجامہ پہن کر ہی نکل کھڑا ہوا تھا ۔سال بھر کی کمائی اس نے تھیلی کی شکل میں پیٹ پر باندھ رکھی تھی۔بوگی میں کسی نے سگریٹ سلگا لیا تھا جس کا کڑوا دھواں کئی مسافروں کو ناگوار گذر رہا تھا مگر کسی نے اسے منع کرنے کی ہمت نہیں کی ۔کیا پتہ وہ پلٹ کر چاقو نکال لے۔آج کل تو لوگ ذرا ذرا سی بات پر دوسروں کی جان لے لیتے ہیں۔اس نے اپنی سانس روک لی ۔اس کا سر چکرانے لگا ۔اس نے اپنے ہاتھوں سے دھوئیں کو بکھیرا اور پھر ایک زور کی سانس لی۔
”چائے!گرم چائے!!“پتہ نہیں کہاں سے ایک چائے والا لوگوں کو الانگھتے پھلانگتے وہاں تک آپہنچا تھا ۔اس کے سامنے والی سیٹ پر بیٹھے ہوئے آدمی نے چائے والے کو اشارے سے بلایا۔
”لیجئے چائے پیجئے۔“چائے کا کلہڑ تھامے ایک ہاتھ اس کی جانب بڑھا ۔اس نے انکار کرنا چاہا مگر اس سے پہلے پھر وہی اصرار کرتی آواز اُبھری۔
”لیجئے نا!“اور اس کا ہاتھ بے اختیار کلہڑ کی جانب بڑھ گیا۔
پہلا گھونٹ چائے گرم تھی۔میٹھی بھی مگر ایک ہلکی سی بے نام تلخی لئے ہوئے۔
دوسرا گھونٹ ویسی ہی گرم اور تلخ۔
تیسرا گھونٹ پھر اس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی۔ایک گہری تاریکی ۔بس ایک ننھا سا ستارہ جھلملا رہا تھا ۔پھر اس ستارے سے ایک ساتھ کئی شعائیں پھوٹیںاور اس کی آنکھوں میں چبھنے لگیں۔اس نے بڑی بے چینی محسوس کی ۔اس نے ایک زور کی سانس لی اور اس کی آنکھیں خود بخود کھل گئیں۔نظروں کے سامنے سفید چھت تھی اور اس سے لٹکتا سیلینگ فین۔اس نے اُٹھنے کی کوشش کی مگر ناکام رہا ۔اس نے نظریں گھمائیں۔کھڑکی کھلی تھی اور صبح کا سورج اپنی تیز کرنوں کے ساتھ اس کے سامنے روشن تھا۔اس کے بائیں ہاتھ میں اب تک چبھن ہو رہی تھی ۔بیڈ کی بائیں جانب ایک خالی بوتل لٹکی ہوئی تھی اور ایک سرنج اس کے بائیں بازو میں کھبی ہوئی تھی۔اس نے بدقت تمام اپنے جسم کو موڑا اور پھر اپنے داہنے ہاتھ سے سرنج نکال کر اٹھ بیٹھا۔اس کے جسم پر صرف میلا کچیلا پائجامہ بچا تھا۔د ا ہنی جانب والا بیڈ خالی تھا ۔زمین پر ہرے کانچ کی چوڑیوں کے ٹکرے بکھرے پڑے تھے۔وہ بستر پر پیر لٹکا کربیٹھ گیا اور خالی خالی نظروں سے چاروں طرف دیکھنے لگا ۔اسے کچھ بھی نہ یاد تھا کہ وہ کون ہے،کہاں سے آیا ہے اور کہاں جانا ہے۔ذہن کسی دھلی ہوئی سلیٹ کی طرح سادہ تھا۔اچانک ایک بوڑھی عورت ہاتھوں میں ایک بوسیدہ سی چادر لئے ہوئے آئی اور بغیر کچھ کہے اس نے وہ چادر اس کے جسم پر ڈال دی۔اس نے اس بوڑھی عورت کو غور سے دیکھا ۔جھریوں بھرا چہرہ،سفید ساڑی،ننگی کلائیاں۔سر پر بے ترتیبی سے پھیلے ہوئے سفید بال اور شفیق آنکھیں۔ار ے یہ تو اماں ہیں۔اماں یہاں کیسے آگئیں۔انہیں گذرے ہوئے تو ایک زمانہ بیت گیا۔پھر اس بوڑھی عورت نے اشارے سے دریافت کیا۔
”بھوک لگی ہے؟“اس نے اثبات میں سر ہلا دیا۔بوڑھی عورت اس کا ہاتھ پکڑ کر اسپتال سے باہر لے گئی۔مین گیٹ سے ذرا ہٹ کر چائے کی ایک چھوٹی سی دکان تھی ۔اس بوڑھی عورت نے دو بسکٹ اور ایک گلاس چائے اس کی جانب بڑھایا۔یہ چائے گرم تھی اور میٹھی بھی۔مگر اس میں تلخی کا شائبہ تک نہ تھا۔چائے پینے کے بعد اس کی آنکھیں پورے طور پر کھل گئیں۔اب وہ سب کچھ صاف صاف دیکھ سکتا تھا ۔اس نے دیکھا سڑک کے کنارے ایک نیم عریاں لاش پڑی تھی ۔لاش کا منہ کھلا ہوا تھا اور اس کی پتھریلی آنکھیں آسمان پر ٹکی ہوئی تھیں۔اسے اُس مردے کا چہرہ جانا پہچانا سا لگا ۔پھر اسے یاد آ گیا۔یہ بھی اس کے ساتھ سفر کر رہا تھا اور شاید اسے بھی چائے پیش کی گئی تھی۔بوڑھی عورت کہہ رہی تھی۔
”یہ بے چارہ تو مر گیا۔پرماتما کی کرپا سے تم بچ گئے۔“
اب ہر شے بالکل صاف اور واضح تھی ۔اسے صرف یہ نہ معلوم تھا کہ ہسپتال تک کیسے پہنچا۔بوڑھی عورت نے اس کی یہ مشکل بھی حل کر دی۔اس نے بتایا کہ رات کو کسی وقت ایک سپاہی ان دونوں کو ایک ٹھیلے پر لاد کر لایا تھا اور ہسپتال کے عملے نے دونوں کو الگ الگ بیڈ پر لٹا کر ایک ایک بوتل چڑھا دی تھی۔وہ دوسرا شخص مر گیا تو اسے ہسپتال سے باہر زمین پر رکھ دیا گیا۔اس نے لاش کی جانب ایک بار پھر دیکھا۔اسے جھرجھری سی آگئی اور اس نے گھبرا کر نظریں پھیر لیں۔
بوڑھی عورت جا چکی تھی۔مگر اس کی دی ہوئی چادر اب تک اس کے جسم سے لپٹی ہوئی تھی اور اب جبکہ زندہ ہونے کا احساس اس کی رگ رگ میں سما چکا تھاتو زندگی کے سارے مسائل بھی اس کے سامنے آن کھڑے ہوئے تھے۔یہی مسائل تو انسان کو زندہ رکھتے ہیں۔اپنے لئے جینا تو وہ کب کا چھوڑ چکا تھا۔اب وہ صرف دوسروں کے لئے زندہ تھا ۔اور جن لوگوں کے لئے وہ جی رہا تھا ان کے پاس خالی ہاتھ کس طرح جائے گا ۔مگر جانا تو تھا ہی ۔وہ ڈگمگاتے قدموں سے پوچھتے پاچھتے اسٹیشن تک پہنچ گیا۔وہاں پہنچ کر وہ پلیٹ فارم کے ایک کنارے بیٹھ رہا۔اب کیا ہوگا؟ بچوں کے کپڑے،کھلونے،بیوی کے ملبوسات،چوڑیاںہرے کانچ کی چوڑیاں۔چھن چھناتی ہوئیچھن چھن چھن۔
چھن کی آواز پر اس نے آنکھیں کھول دیں۔کسی نے اس کے آگے ایک سکہ پھینک دیا تھا۔پھر تھوڑے تھوڑے وقفے سے سکے گرتے رہے اور وہ خالی خالی نظروں سے بس انہیں دیکھتا رہا۔دور بیٹھا ایک فقیر دزدیدہ نگاہوں سے اس کی جانب دیکھ رہا تھا۔کئی گھنٹے یوں ہی گذر گئے۔دو بجے اس کے شہر کی جانب جانے والی گاڑی آئی تو وہ اُٹھا اور زمین پر پڑے سکوں سے بے نیازانہ آگے بڑھ گیا ۔دور بیٹھا فقیر کسی چیل کی طرح جھپٹا اور اپنے غلیظ ہاتھوں سے سکے بٹورنے لگا۔وہ ٹرین میں سوار ہو کر دروازے کے پاس ہی بیٹھ رہا۔
جس وقت گاڑی اس کے شہر پہنچی شام گھِر آئی تھی۔وہ اسٹیشن سے باہر نکلا اور ڈگمگاتے قدموں سے اپنے گھر کی جانب بڑھا۔مغرب کی اذان ہو رہی تھی اور گلی میں سناٹا تھا ۔اس نے کانپتے ہاتھوں سے اپنے گھر کا دروازہ کھٹکھٹایا۔اندر سے اس کی بیوی کی آواز آئی۔
”لگتا ہے کوئی افطار مانگنے آیا ہے۔“اس نے پھر کنڈی کھٹکھٹائی۔اسے برتنوں کے رکھنے اور اُٹھانے کی آواز آئی ۔اس نے چاہا کہ آواز دے مگر نقاہت نے اس کی زبان کو گویا بے جان کر رکھا تھا۔پھر دروازہ کھلا اور چوڑیوں بھرا ایک ہاتھ افطار کی پلیٹ لئے سامنے آیا۔
”سلمہمیں ہوں ،میں۔“اس نے بڑی مشکل سے کہا ۔سلمہ کے منہ سے چیخ نکل گئی۔چیخ سن کر بچے دوڑتے ہوئے آئے اور اسے اس حال میں دیکھ کر دم بخود رہ گئے۔ پھر سلمہ نے اپنے آپ کو سنبھالا اور اسے سہارا دے کر اندر لے گئی۔
را ت کے بارہ بج رہے تھے مگر نیند اس کی آنکھوں سے کوسوں دور تھی۔ چاند کا اعلان ہو چکا تھااور باہر گلی میں اب تک چہل پہل تھی۔سلمہ اس کا بدن دبائے جاتی تھی اور روتی جاتی تھی ۔دوسرے پلنگ پر بچے سوئے پڑے تھے۔اچانک وہ اس جانب مڑا اور گلوگیر آواز میں بولا۔
”سلمہ! اب ہم عید کیسے منائیں گے؟“سلمہ نے ساری کے پلو سے آنکھیں پونچھتے ہوئے کہا۔
”آپ صحیح سلامت گھر آ گئے۔ہماری عید ہو گئی۔“

Published inاقبال حسن آزادعالمی افسانہ فورم