Skip to content

شکنتلا

شکنتلا
غزال ضیغم ۔ لکھنؤ،انڈیا
شفاّف پانی سے بھرا حوض جس میں سنہری روپہلی ننھی ننھی مچھلیاں تیر رہی تھیں ۔سفید اور گلابی کنول کے پھول دھیرے دھیرے کِھل رہے تھے ۔ان کے گول سبز پتّوں پر پانی کی بوندیں ہیرے کی طرح چمک رہی تھیں ۔
ٹھنڈی ہوا چل رہی تھی ۔خوشبو دار انگنت بیلیں جھول رہی تھیں ۔ایک لمحہ کو پانی میں شکنتلا کا عکس جھلملا یا اور اسکی کھنکتی ہوئی ہنسی جنگل جاگ اٹھا ۔جھر نے بہنے لگے ۔پھلوں نے درختوں کی ڈالیوں کو جھکا دیا ۔
گہری نیند سے د شینت جاگ اٹھا ۔اچانک اسکی نظر انگو ٹھی پر پڑی ۔۔۔۔ارے ابھی تو شکنتلا کے ساتھ چہل قدمی کر رہا تھا ۔جنگلی ہوا تھی ساتھ ۔۔۔۔کہاں گئیں تم ۔۔؟
اسنے پی ۔اے کو فون کھڑ کھڑا یا ۔
“ذرا فون نمبر بتا نا شکنتلا کا ۔۔۔؟”
نہ جانے بے چاری آشرم میں کیسی ہوگی ۔میں تو بھول ہی گیا الیکشن لڑ نے کے چکّر میں رہ گیا بر سوں بیت گئے ۔۔
“سر ۔۔۔!”
“یس ۔۔۔۔”
“کس شکنتلا کا نمبر چاہیئے ؟
“واٹ۔۔۔۔؟”
“سر جی میرا مطلب ور مالا شکنتلا ورما ؟سادھنا شکنتلا سوسودھیا ؟ شکنتلا چودھری ؟ساگریکہ شکنتلا آریہ ؟ رومیلا شکنتلا باٹلی والا ؟
“کیا بک رہے ہو ۔۔۔۔؟
(شکنتلا ۔۔۔تمہارا سر نیم کیا ہے پیاری ۔۔جسٹ آئی فارگیٹ )
“سر آپ کے کمپیو ٹر میں کئی نمبر ہیں ۔”
“پیشے سے دیکھو تو ذرا ۔۔۔”
“ساگریکہ ڈانسر ہے
ور مالا ٹیچر ،رومیلا ٹرانسپورٹ کمپنی میں ہے ،چو دھری ہاؤس وائف ہیں ،سادھنا ٹا ئیپسٹ ہیں ۔۔۔۔”
“دیکھو وہ آشرم میں رہتی تھی رشی جی کے ۔۔ہرا بھرا جنگل تھا خوب گھنا ۔۔دن میں بھی روشنی نہیں نظر آتی تھی اتنی ہر یالی تھی ۔۔وہاں میں ہرن کا شکار کر نے ہی تو گیا تھا ۔۔”
“کس اسٹیٹ کے جنگل میں سر ؟؟”
“یاد نہیں آرہا اسٹیٹ کا نام ۔۔۔”
“سر ۔۔۔تمام جنگل کٹ چکے ہیں ۔۔۔کالے ہر نوں کا شکار شہباز خان کر چکا ہے ۔۔۔اور تمام سفید ہر نوں نے اس خوف سے خود کشی کر لی ہے کہ انکو کوئی قتل نہ کر دے ”
“اڈیڈ یٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“یس سر ۔۔۔۔”
“اچھّا2010۔ٹیلی فون انکوئری سے پو چھو ۔۔۔”
“سر وہ ٹاپ ماڈل مادھو ریما شکنتلم کا نمبر دے رہا ہے ۔۔”
“تو ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہی لے لو ۔!”
(یہی سہی ۔۔۔۔)

Published inعالمی افسانہ فورمغزال ضیغم