Skip to content

دائرے

افسانہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دائرے

تحریر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فرحین چوہدری

ان   کی تعداد شاید   پانچ  تھی یا   دس   . .  . وہ  سینکڑوں   میں   تھے   یا ہزاروں   میں  ؟ یہ   معلوم  نہیں   ..ویسے بھی  تعداد  سے کچھ فرق  پڑتا   ہے بھلا  ؟   رحمان  بھی   ایک  ہی  ہے نا   اور شیطان  بھی ایک   . . .

ان  سب نے سر  جوڑے   اور باہمی مشورے  سے ایک بچھڑا  بنایا . . اس  کی آرایش و  زیبایش   کے بعد  اس کی پوجا    شروع   کر دی  . . .وہ دن  بھر ایک دوسرے  سے منہ موڑے   اپنے اپنے   سورج  کی پوجا   میں مصروف رہتے  . .جو وہ خود اپنے کھیتوں   میں اگاتے   تھے . . کسی  کا سورج بڑا  تھا  ، کسی کا چھوٹا ! 

جس  کا سورج   جتنا بڑا   تھا    وہ اتنی ہی   بڑی کھیتی کا مالک  اور  اتنے ہی زیادہ  اس کے حواری   . . جتنے زیادہ    حواری تھے ، اتنی  ہی اس کی شکار  گاہ وسیع ..چھوٹے  سورجوں  والےچھوٹی کھیتیوں  کے مالک ، بڑے  سورج  اور بڑے   کھیتوں   کو حریص  نگاہوں   سے تکتے   رہتے   . . .رات آنے پر فراغت  کے لمحوں   کو وہ سب اپنی  اپنی شکار گاھوں  کے حجم  کے حساب   سے گزارتے   ..

ہاں  چند لمحے   وہ ضرور  مل بیٹھتے  کہ  بچھڑے  کی نذر  و  نیاز  کے چند  خاص  دستور تھے   کچھ رسومات   تھیں  جو ان سب کو بچھڑے  کے حضور ادا  کرنا ہوتیں    کہ اس  میں ان کی   بقا تھی . . .

انہوں  نے اپنے بڑے   بوڑھوں  سے سن رکھا  تھا   کہ   بہت عرصہ پہلے بھی ایک   قدیم قوم نے ایسے ہی ایک بچھڑے  کی پوجا  شروع  کی تھی  لیکن چونکہ   وہ قوم  کسی  اور  جانب  نکل گیی   تھی سو بچھڑا ان  سے چھین  لیا  گیا   تھا    . . .بعد    والے ادوار میں بھی بچھڑے  کو بار بار   پوجا گیا . .مختلف  حیلوں  ،  حربوں   اور اشکال  میں، مگر بات نہ   بنی   . .شاید ان   قبیلوں   میں   وہ خصوصیات   نہ   تھیں  جو بچھڑے  کے پجاریوں کے لئے  مقدم  تھیں   . . ان  کا عقیدہ بھی  خام  تھا شاید   . .پھر  ایسا  بھی تو ہوتا تھا  کہ کہیں    سے  کچھ پراسرار   لوگ آجاتے  . . جو دھیرے دھیرے  شہر   میں پھیل جاتے   .  .لوگوں  کے دلوں  میں بچھڑے  کے متعلق  شکوک  و  شبھات   پیدا   کرتے   .. ان  کی سرگوشیاں   رگ  و  پے  میں سرایت  کرتی جاتیں    اور بچھڑے  سے نفرت  بڑھتی  جاتی  .یہاں تک   کہ  سوچ  ڈانواں  ڈول  ہونے لگتی   .. کھسر پھسر  ہوا کی زبانی   ادھر  ادھر   پھیلنے   لگتی  . .پہلے چپکے   چپکے   پھر  اونچے  سروں  میں لوگ بچھڑے  کو لعن  طعن  کرنے لگتے . . ٹولیاں  بنا  بنا   کر اس کی ہرزہ  سرایی کی جاتی   .. اور اخر ایک دن   بچھڑے  کے  ناک  کان  دم   اور ٹانگیں   توڑ   کر  اسے  شہر  سے باہر  کہیں  دور   ریت  میں   دفنا   آتے   یا   تاریک  کنوییں  میں پھینک   دیتے  . . .

شہر  پر ایک خاموشی   چھا جاتی  جو  ابتدا   میں پرسکون  لگتی   . .آہستہ  آہستہ   فضاؤ ں  میں پراسراریت  تیرنے لگتی  . .پراسراریت کے بطن  سے بے چینی   جنم  لیتی  اور   کلبلاہٹ سے سارا  شہر  بھر جاتا   .. ..ایک دوسری  قسم  کے لوگ  موقع  پا  کرشہر  کو اندر  ہی  اندر   اپنی   لمبی لمبی زبانوں سے

 چاٹنے   لگتے   ..بنیادیں  اور دیواریں کمزور  ہونے  لگتیں تو شور  شرابا جنم  لیتا  . . بھنبھناہٹ کی صورت  بچھڑے کی واپسی  کا تقاضا  کرنے لگتے   باسی. .  . .گلیوں  میں بازاروں  میں ہوا میں  سرخ  رنگ حلول کر جاتا  . .  لمبی زبانوں  والے   دیمک کے حواری  ٹولہ  بنا کرشہر  سے باہر جاتے  . . سال خوردہ   ٹوٹے پھوٹے  بچھڑے  کو کنویں  سے  نکال  لاتے  . ..اسے  شہر  کے بیچوں بیچ  نصب   کر دیا جاتا  اور اس کی صفایی  ستھرایی  کا   کام شروع  ہو جاتا  .. خوفزدہ  لوگ دور  دور   سے نظارہ  کرتے  . . کبھی کبھار ادھر ادھر  دیکھتے  اور آہستگی  سے   بچھڑے  کو  چھو لیتے  .  .

بچھڑے  کو چھو  لینا ہی غضب  ہو جاتا .  . .جانے  کیا اثر تھا   اس کے لمس  میں کہ  وہ خود بھی ملامت زدہ  ہجوم  کا حصہ  بن جاتے  اور بچھڑے  کو رگڑ  رگڑ  کر چمکانے لگتے . . تباہ شدہ   حصوں  کی مرممت  ہوتی . .رنگ روغن  تازہ  کیا   جاتا  . . دانت، سینگ  اور کھر بطور  خاص  تیز  کیے جاتے  تا  کہ  شہر  والوں  کے دلوں  پر  اس کی ہیبت  بٹھایی  جا  سکے  . . پھر ایک   نیے  اونچے چبوترے  پر  اسے نصب  کر کے  اس  کے   گرد   مقدس  پانی کا چھڑکایو ہوتا  . . . عود و لوبان سلگایے  جاتے  . . .پروہت  پوتر  الفاظ  بدبداتے   اور بچھڑا  پھر سے  ”  مقدس ” ہو جاتا  . .

کچھ پروہت  دن رات اس کی مدح سرایی  کرتے  .  .ایسے  عقیدوں  کو عام کیا  جاتا  جو بچھڑے  کو شہروالوں   کا نجات  دھندہ  ثابت   کرتے  .  .لیکن ہوتا یوں  کہ  شہر  والوں کے  چو لہے   ٹھنڈے  پڑنے  لگتے  . .خوف کا   بھوت  گھروں  میں چکر  کا ٹنے لگتا . .. . بھوک  پیاس  کے مارے  لوگوں  کی  آنکھیں  ابلنے لگتیں  ، ٹانگیں  سوکھ  کر زمین  سے جا لگتیں   اور  وہیں  چپک  جاتیں   . ..وہ رینگ  رینگ  کر چلنے لگتے  کہ سر اٹھا کر چلنا  اں  کے لئے  ناممکن  ہو جاتا   .. ان کے کان  الوہی  راگ سننے  سے معذور ہو جاتے .. ان کے کانوں  میں صرف  مقدس  پروہتوں  کی آوازیں  گونجتیں    . ..

صدیوں  زمین پر رینگتے  رینگتے   ان کے  جسم بے حس  ہونے لگتے   . .تب  کہیں سے  تازہ  ہوا  کی لہر  انہیں   چھو  کر ایک نیے  احساس  سے آشنا  کرنے لگتی   ..یہ احساس  انہیں گہری  مصنوعی  نیند  سے چونکانے  لگتا   ..وہ اپنے جسموں  پر ہاتھ پھیرتے   تو لگتا  ان کے جسم نرم پڑ  رہے ہیں . .وہ اس ہوا  کو تیز  تیز   سانسوں  کے ذریعے اپنے اندر   اتارنے  کی کوشش  کرتے  ، جس کی خوشبو انہیں   مست کرنے   کی  بجایے  چوکنا کر  دیتی    .. . . .وہ اپنے اطراف  کا جایزہ  لیتے  . .ان  کے رینگنے   کی رفتار  تیز ہو جاتی  حتی  کہ وہ چلنے   اور پھر بھاگنے   پر مجبور  ہو جاتے  .. .نہ  جانے  کیسے   ان کا  رخ  بدل  جاتا  اور  وہ بچھڑے  کی مخالف  سمت  میں بڑھنے  لگتے   .. پروہت   انہیں   چاروں اطراف  سے اپنے نرغے  میں لے کر  عو د و لوبان  کی  دھونی سے انہیں   غافل   کرنے   کی کوشش   کرتے ،  ایک دایرے  میں چلنے   پر مجبور  کرتے  ،  اس عمل  میں کچھ  لوگ زمین سے   جا لگتے   اور پھر  کبھی نہ آٹھ  پاتے   ..

چند  افراد  پروہتوں  کا نرغہ  توڑ  کر  شہر  کے کونوں کھدروں میں جا چھپتے  . . پہلے   سرگوشیوں  اور پھر نعروں  کی صورت  بچھڑے  کی پوجا   کی مخالفت  کرتے   . .ان   کی آوازوں  کی گونج  سے پورا  شہر  ڈولنے  لگتا  .. پروہتوں  کے لباس  تار تار ہونے لگتے   . .مقدس برتن  ایک ایک   کر کے ٹوٹنے لگتے    .. پروہت  باغیوں  کے خوف  سےخفیہ  تہ  خانوں   میں جا چھپتے  . . بچھڑا  بے چارہ   پھر سے اپنی چمک کھونے   لگتا  . .

یہاں  تک کہ چند سر پھرے  اسے  جلوس کی   صورت شہر بدر  کر دیتے 

وقت کا پہیہ  گھومے جا رھا تھا ….بچھڑے کے  پجاریوں  اور سر پھروں  کے درمیان  جنگ جاری تھی  . .کبھی پجاری  پہیے  تلے  کچلے  جاتے  اور کبھی سر پھرے   … .مگر  اس بار  بچھڑے  کی جو پوجا شروع  ہویی   وہ عجب تھی    . . اس بار  بہت  سارے  سورج  بھی تو  تھے

ان کی عبادت  بھی واجب تھی . . اب   کسی   کے پاس  کچھ محسوس  کرنے   کا وقت  تھا   نہ   ہوا  کی  خوشبو  سونگھنے  کا  . . رینگ  رینگ کر چلنے  سے ان کی ٹانگیں  لجلجے  گوشت میں  تبدیل  ہو چکی  تھیں  . .  سورج  کی پوجا نے  ان کی کمروں میں بڑے بڑے کب پیدا  کر دیے  تھے   ..  آنکھیں  روشنی  اور اندھیرے  میں تمیز  کرنے سے انکاری  . .اپنی ناک  سے آگے  کا منظردیکھنے سے قاصر تھیں  ..بچھڑے  کے آگے   مسلسل  ماتھا  ٹیکنے  کی وجہ  سے  سروں  پر بڑے  بڑے  گومڑ  ابھر  آیے   جو دھیرے   دھیرے  نوکیلے  سینگوں  میں تبدیل  ہو رہے تھے  . . . .ہر شخص   دوسرے  کے راستے  میں آنے سے  گریزاں  ، مبادا  کہ سامنے  والے کے    سینگ  اسے نہ  زخمی  کر دیں   .. سبھی کے   سینگ  نوکیلے   تر  ہوتے    گئے، حتی  کہ   بچے   بھی ان   سوغاتوں   سمیت   پیدا  ہونے   لگے   ..

  ایک رات  کے پچھلے   پہر نے  بڑی  حیرت  سے اس نو زایدہ  بچے  کو دیکھا  جس کی  حیت والے   بچے  کی گواہی  پچھلی  کیی  صدیوں  نے  نہیں  دی تھی . . اس کی ٹانگیں  سیدھی  اور جاندار تھیں  . . .بغیر  کب کے کمر  اور  صا ف  ماتھا  جس پر کسی  گومڑ  کا نشان  تک  نہ  تھا ایسا بیٹا    پیدا  کرنے  والوں نے  خوف کے مارے  اسے اندھیرے  کمرے میں چھپا  دیا   .. ..مگر ہوا  اور آندھی  نے یہ خبر  پروہتوں  تک  پہنچا دی . . تعجب  نے کیی  چہروں  کے زاویے  بدلے  کہ ایسے  بچوں  کا ذکر تو   قدیم  قصوں  میں ملتا  تھا  . . ”  وہ بڑا   ہو کر ہمارے جیسا  بن  جایے   گا  ، نہ  بھی   بنا تو بنا دیا  جایے  گا  ”  . بڑے  پروہت  نے یقین  کے ساتھ تسلی  دی   سو وہ بے فکر  ہو گئے 

پھر ایسا  ہوا   کہ اسی  نوجوان  نے  جوانی کی  دیوی کو اپنی آغوش  میں  لیا  ،  توانا  چال چلتا  ہوا   کمر  اکڑائے اپنے روشن  ماتھے  کو   سورج  کے سامنے  ٹیکے بغیر  سیدھا  بچھڑے  کے سامنے   جا کھڑا  ہوا   ..اس نے لجلجی  ٹانگوں والے  رینگتے  ہویے  لوگوں  پر ایک نظر  ڈالی  . . .ان کے نوکیلے  سینگوں  پر غور کیا  اور  زور سے  ایک لات  بچھڑے  کو دے ماری…ایک دھماکہ  ہوا  . صدیوں  پرانی خاک  اڑ  کر کبڑوں  کے چہروں  پر جمنے لگی  . . وہ چلانے لگے  . . ان کی نظر  جو پہلے ہی   ناک سے آگے   نہ  جاتی تھی   . .مزید دھندلا  گئی . . جوان  نے پتھرائی  ہوئی  آنکھوں  والے  پروہتوں  اور شہر  والوں  کے نوکیلے سینگ اپنے طاقتور  ہاتھوں  سے اکھاڑ  پھینکے  . . درد  کی شدت  سے بے حال  لوگوں کو یوں  لگا جیسے   ان کی  ٹانگوں   میں جان آ رہی ہو   ..ان  کی نگاہیں   دور کا منظر  دیکھنے لگیں   ..کمر کے کب سیدھے  ہونے لگے   وہ خود   کو  ٹٹول  ٹٹول  کر دیکھنے  اور خوشی  سے بے قابو   ہو کر  دیوانہ  وار     رقص   کر نے لگے  . .صدیوں بعد  انہوں  نے  زمین  کو اونچایی سے دیکھا . . . .انہوں   نے جوان  کو کاندھوں  پر اٹھا  لیا   ..  تمام  سورج  گل  ہو گئے  ..بچھڑے  کے ٹکڑے  کرنے کے بعد  وہ اسے  ایک ایسے  اندھے   کنویں  میں پھینک  آیے  جہاں   جانے   کا مطلب صرف  موت    تھا . .  .

.کہا جاتا  ہے  ایک لمبے عرصے  تک وہاں  سر اونچا  کر کے چلنے والے  لوگ پیدا ہوتے رہے  . . .جن  کی کمریں سیدھی  اور  ماتھے  صاف    تھے   .. اور وہی جوان  ان   کا سردار ہوا . . .آسمان  نے رنگ  بدلا . .ایک رات   بڑی خوفناک   سرخ  آندھی   آئی   . .جسے  شہر  سے باہر  چھپے   پروہتوں   نے  بلایا  تھا   .. شہر  مٹیالا  سا ہونے لگا   . . .سب   اس صورت  حال  پر پریشان  اور سردار  خاموش تھا  … .چند  لوگوں نے  ایک رات   ایک سائے  کو شہر  سے نکلتے  اور  اندھے کنویں  کی جانب جاتے  دیکھا   .. انہوں  نے اس کا  پیچھا   کیا   . .وہ شخص  نہ جانے  کیسے   اندھے  کنویں  میں بآسانی  اتر   گیا   .. واپس نکلا تو اس  کے ہاتھوں  میں  بچھڑے  کے کچھ حصے تھے  ..وہ خاموشی  سے  شہر میں داخل  ہو گیا  . . جب اپنے ہی  گھر میں چوروں  کی طرح گھسا   تو  پیچھا  کرنے والوں کی  نظریں   آپس میں   ملیں  . . .حیران   مگر   فیصلہ  کن !!!

اگلی  صبح  شہر والوں  نے  آنکھیں مل   مل کر دیکھا  . .شہر  کے بیچوں  بیچ  رنگ  و  روغن  سے عاری  . .دراڑوں سے اٹا  بچھڑا  اپنی پرانی  جگہ  موجود تھا . . مگر  اس کے سر  کی جگہ  ان کے نجات  دھندہ  ، ان کے سردار   کا سر لگا ہوا تھا  . .            

Published inفرحین چوہدری