Skip to content

بلا عنوان

بلا عنوان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اسماء حسن

زندگی کی محرومیوں اور کُملائی ہوئی خواہشات پر نوحہ پڑھتے پڑھتے اس کا گلا خشک ہو چلا تھا ۔۔۔۔۔ ۔ آنسوؤں کےخارزار کانٹے اس کی آنکھوں کے کونوں کھدروں میں بسیرا کیئے ہوئے تھے۔۔ جن کی چبھن سے اسے بے حد تکلیف ہو رہی تھی ۔۔۔۔ مگر وہ خود کو صبر کی چکی میں پیستی رہتی تھی اس لئے آج صبح سے ہی اس نے پونٹوں پر جبر کے موٹے موٹے قفل لگا رکھے تھےاور آواز نے چپ سادھ رکھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹیلی فون کی گھنٹی مسلسل بجتی رہی ۔۔۔۔ وہ تھوڑی دیر تک ٹیلی فون کے پاس کھڑی اسے گھورتی رہی ، جیسے انتظار میں ہو کہ فون کرنے والا خود ہی تھک ہار کر بیٹھ جائے اور اسے ہیلو کہنے کی زحمت نہ اٹھانی پڑے ۔۔۔۔۔ مگر شائد صحیح کہا ہے کسی نے کہ لوگ بھی جلتی پر تیل چھڑکتے ہیں ۔۔۔۔ فون کرنے والے نے ٹھان رکھی تھی کہ آج اس کے ہونٹوں کے بند تالے کھول کر ہی سانس لے گا ۔۔۔۔۔۔۔ لگاتار بجنے والی گھنٹی پراسے ساکت لبوں کو جنبش دینی پڑی ۔ اس نے خود کوقدرے سنبھالتے ہوئے فون کا ریسیور اٹھایا ۔۔ دوسری طرف سے ساس کی آواز سنائی دی ۔۔۔۔
” مبارک ہو تمہاری چھوٹی نند کو اللہ نے دوسرا بیٹا عطا فرمایا ہے ۔۔۔۔ مجھے تو بے حد خوشی ہے اللہ نے میری بیٹی کی جوڑی بنا دی ۔۔۔۔ اس رب کا بہت بہت احسان ہے ۔۔۔۔۔۔۔”
لرزتی آواز میں سدھار لاتے ہوئے اس نے بڑی مشکل سے جواب دیا کہ کہیں ساس یہ نہ پوچھ لے، ” تمہاری آواز بھاری کیوں ہے۔۔۔۔۔۔ تم رو تو نہیں رہی تھی ۔ کیا ہوا تمہیں ۔۔ کسی نے کچھ کہا ہے کیا ۔”۔۔۔۔۔ وہ ہمیشہ سے ہی ایک اچھی بہو بننے کی سر توڑ کوشش کرتی آئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ اس لیئے اس کا گمان غالب تھا کہ ایک اچھی بہو سے ایسے سوال ہونے چاہیئیں ۔۔۔۔۔ مگر دوسری جانب سے ایسا کوئی سوال سنائی نا دیا تو اس نے کچھ توقف کے بعد بات آگے بڑھائی ۔۔۔۔۔
” جی امی بہت بہت مبارک ہو آپ کو ، اللہ دونوں ، ماں بیٹے کو سلامت رکھے ۔۔۔۔۔ اور آپ کیسی ہیں ، آپ کی طبیعت کیسی ہے ۔۔۔۔۔”
” میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔ بس آج صبح سے بے حد خوش تھی ۔۔۔۔ رات کو ہی خبر ملی تھی کہ صائمہ کو اللہ نے بیٹا دیا ہےتو سوچا تمہیں بتا دوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میری خوشی کا تو کوئی ٹھکانہ ہی نہیں ۔۔۔۔۔۔۔”
جی امی یہ ہے ہی خوشی کی بات ، آپ کو پھر سے بہت بہت مبارک ہو ۔۔۔۔ دوران گفتگو اسے کھانسی کا زوردار جھٹکا لگا اور ریسیور ھاتھ سے چھوٹ کر زمین پر گر گیا ۔۔۔۔ اس نے ہمت کی اورجلدی سے ریسیور اٹھایا اور اپنی بات کا سرا وہیں سےجوڑا
“جی امی ۔۔۔۔ اصل میں کھانسی کی وجہ سے ریسیور نیچے گر گیا تھا ۔۔۔۔ ہماری طرف سے سب گھر والوں کو بھی مبارک باد دیجئے گا ” ۔۔۔۔۔۔
بچوں کی طرح اس نے کھانسی پر کچھ زیادہ ہی زور دیا تھا کہ شائد یہ ہی سن کر دوسری طرف سے کوئی سوال ہو گا مگر دوبارہ مایوسی کا سامنا کرنا پڑا ۔۔۔ اور جواب ملا ۔۔۔۔۔۔۔
” ہاں ہاں خیر مبارک ۔۔۔۔۔۔ چلو ثاقب آئے تو اسے یہ خوشخبری سنا دینا ۔۔۔۔۔ ، میں اب فون رکھتی ہوں ، خدا حافظ ۔۔۔۔ “۔
خداحافظ کہتے ہی اسے ماں کی یاد ستانے لگی تھی ۔۔۔
” اگر آج امی زندہ ہوتیں تو کیا وہ میری ایسی آواز سن کر یہ نہ پوچھتیں کہ تمہاری آواز کو کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تم رو کیوں رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تم ٹھیک تو ہو ناں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن شائد میری آواز ان تک صحیح پہنچ ہی نہ رہی ہو ۔۔۔۔۔”
اچھی بہو غالب آئی اور اس کے اوپر طاری ہونے والے منفی رجحانات کو ٹوکنے لگی ۔۔۔۔۔۔ اسی اثناء میں اس کے من میں ایک خیال آتا ہے ۔۔۔۔۔ وہ فون اٹھاتی ہے ۔۔ نمبر ملاتی ہے ۔۔۔ دوسری طرف سے باپ کی آواز کانوں میں گونجتی ہے ۔۔۔۔۔ وہ خود کو سنبھالتے ہوئے اسلام علیکم کہتی ہے کہ کہیں باپ کو اس کی خراب طبیعت کا کچھ اندازہ نہ ہو جائے ۔۔۔۔۔۔ اسلام علیکم سنتے ہی باپ نے تشویش ناک لہجے میں پوچھا ، کیسی ہو مہوش ۔۔۔۔۔وہ باپ کی اضطرابی کیفیت پہچان گئی اور اپنی آواز کو جھوٹے الفاظ کا سہارا دیتے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔
” بالکل ٹھیک ہوں ابو ۔۔۔۔ آپ بتائیں آپ کیسے ہیں ، آپ کی طبیعت خراب تھی ناں ۔۔۔۔۔ اب آپ کیسا محسوس کر رہے ہیں ۔۔۔ میں نے سوچا آپ کی طبیعت کا پوچھ لوں کافی دن ہو گئے تھے۔۔ آپ سے بات نہیں ہوئی تھی ۔۔۔۔”
ان سب باتوں کا جواب دینا باپ نے ضروری نہ سمجھا ۔۔۔۔۔
” تمہاری آواز کو کیا ہوا ہے ، اتنی بھاری کیوں ہے ، تمہاری طبیعت تو ٹھیک ہے ؟ ، مجھے ایسا کیوں لگ رہا ہے کہ تم رو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔ ”
باپ کے سوالیہ جملے سن کر اس کے حلق میں قید با مشقت کاٹتے سارے آنسو ایک ایک کر کے آزاد پونے لگے ۔۔۔۔۔ جن کو صبر کی ہتھکڑی سے باندھتے ہوئےبڑی مشکل سے وہ بولی ۔۔۔۔۔۔۔ ” نہیں نہیں ابو وہ دراصل آج میں نے کھانے میں لیموں ڈال دیا تھا اور آپ کو تو معلوم ہے مجھے اس سے الرجی ہے ۔۔۔۔۔ جس کی وجہ سے گلا خراب ہو گیا ۔۔۔۔۔۔ کھانسی ہو گئی تھی ۔۔۔۔۔ موسم بھی بدل رہا ہے ناں ابو ۔۔۔ ویسے بالکل ٹھیک ہوں ۔۔۔۔ آپ فکر نہ کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔ میں بس قہوہ پی لوں گی تو ٹھیک ہو جاؤں گی ۔۔۔۔۔”
۔
” تو بیٹا قہوہ پی کر فون کرنا تھا ناں ۔۔۔۔۔۔ اب تمہارے اس بوڑھے باپ کو نیند کیسے آئے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اس نے یہ سنتے ہی بڑی مشکل سے خداحافظ کہا اور آنکھوں میں بندھے جبر کے بند کو کھول دیا ۔۔

Published inاسماء حسنافسانچہعالمی افسانہ فورم